Wednesday, February 02, 2011

اے راجا گرفتار


نئی دہلی : اسپیکٹرم گھپلے میں ملوث سابق مرکزی وزیر برائے مواصلات اے راجا پر گرفتاری کی جو تلوار رہی تھی آخر کار ان پر گر ہی پڑی اور سی بی آئی نے انہیں گرفتار کر لیا۔بدھ کو بھی سی بی آئی نے نئی دہلی میں اے راجہ سے چوتھی بارپوچھ تاچھ کی ۔ 2جی اسپیکٹرم گھپلے کے سلسلہ میں سی بی آئی پہلے ہی کئی ان لوگوں کے دفاتر و رہائش گاہوں پر چھاپے مار چکی ہے جو اس گھپلے میں ملوث ہیں۔ آج کی پوچھ تاچھ کے بعد سی بی آئی نے کہا تھا کہ راجا کے خلاف کیس بہت مضبوط ہے اور انہیں کسی بھی وقت گرفتار کیا جا سکتا ہے۔حالات جس طرح کروٹیں لے رہے ہیں اس سے یہی محسوس ہوتا ہے کہ سی بی آئی نے اپنی تفتیش میں تیزی لانے کا فیصلہ کر لیا ہے۔اور وہ جلد ہی اس معاملے کو حل کرنا چاہتی ہے۔ وزیر مواصلات کپل سبل کے ذریعہ تشکیل دی گئی جسٹس شیو راج پاٹلکمیٹیکی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اے راجا اور محکمہ مواصلات کے کچھ افسروں نے 2جی اسپیکٹرم الاٹ کرنے میں ضابطوں کی خلاف ورزی کی تھی۔سی اے جی نے اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ ان بے ضابطگیوں کی وجہ سے سرکاری خزانے کو پونے دو لاکھ کروڑ روپے کا نقصان ہوا تھا۔سیاسی حلقوں میں یہ قیاس آرائی کی جارہی ہے کہ راجا بدھ کی شام تک گرفتار کئے جا سکتے ہیں۔سی بی آئی نے اس گھپلے کے افشا ہونے کے بعد اپنی تفتیش کے دوران اے راجا کی دہلی اور چینئی میں واقع دفاتر اور رہائش گاہوں پر بھی چھاپے مارے تھے۔سی بی آئی نے پاٹل رپورٹ کی روشنی میں پیر کو بھی اے راجا سے پوچھ گچھ کی تھی۔ منگل کو سی بی آئی نے راجا کے بھائی اے کالیہ پیرومل اور راجا کے ایک قریبی ساتھی سے بھی پوچھ تاچھ کی تھی۔
Read In English

0 comments:

Post a Comment