Monday, February 07, 2011

لندن میں پرویز مشرف پر جوتے پھینکے گئے


لندن: یہاں پاکستان کے سابق صدر جنرل پرویز مشرف پر ایک پروگرام کے دوران جوتے پھینکے گئے۔بتایا جاتا ہے کہ پرویز مشرف یہاں کے والٹ ہیمز ٹاﺅن میں ایک پروگرام میں اپنے دور اقتدار کی داستان سنا رہے تھے کہ اسی دوران ایک شخص نے مشرف کی جانب جوتا اچھالا اور پھر ایک دوسرے شخص نے بھی ان پر جوتا پھینکا ۔ لیکن دونوں کے نشانے چوک گئے اور مشرف کو جوتے نہیں لگے۔ یہ جوتے اگلی صف میں جا کر گرے اور ڈائس تک نہیں پہنچ سکے ۔جوتے پھینکنے کے بعد ان دونوں نے ڈاکٹر عافیہ صدیقی کے نام کے نعرے لگائے۔ جیسے ہی ہنگامہ مچا سیکورٹی گارڈز اندر داخل ہو گئے اور اور جوتے مارنے والوں کو پکڑ کر باہر لے گئے۔یہ پروگرام پرویز مشرف کی پارٹی آل پاکستان مسلم لیگ کے زیر اہتمام ہو رہا تھا جس میں تقریباً ڈیڑھ ہزار لوگ موجود تھے۔جوتے پھینکنے والے ایک شخص نے کہا کہ گارڈ نے اس کو زد و کوب کیا ہے۔ اس بات کا شک کیا جا رہا ہے کہ جوتے پھینکنے والے دونوں افراد برطانیہ میں ممنوعہ المجاہدین نام کی تنظیم سے وابستہ ہیں۔ اس واقعہ پر شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے مشرف نے کہا کہ وہ دونوں ان کے قریب آئے ہوتے تو وہ انہیں تھپڑ رسید کرتے۔اپنی تقریر کے دوران مشرف نے پاکستان مسلم لیگ ۔ ن کے لیڈروں پر سخت تنقید کی۔پاکستان کے کسی موجودہ یا سابق صدر پر جوتے پھینکنے کا یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں ہے ۔ اس سے پہلے موجودہ صدر آصف علی زرداری پر بھی اگست 2010میں اسی طرح اس وقت جوتا پھینکا گیا تھاجب وہ برطانیہ میں ایک ریلی سے خطاب کر رہے تھے۔پرویز مشرف نے 1999میں پر امن انقلاب کے بعد اقتدر سنبھالا تھا اور 9سال تک بر سر اقتدار رہے اور پاکستان چھوڑ گئے ۔ اب وہ لندن میں مقیم ہیں۔
Read In English

For news in Urdu visit our page : Latest News, Urdu News

0 comments:

Post a Comment