Monday, February 14, 2011

اب قریشی کا پیپلز پارٹی میں بھی مستقبل غیر یقینی: فوزیہ وہاب


اسلام آباد(اردو تہذیب)؛ پاکستان کے سیاسی حلقوں میں سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے بارے میںسرگوشیاں ہو رہی ہیں اور عام خیال یہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ان کو کسی بھی وقت پیپلز پارٹی سے بھی بر طرف کیا جا سکتا ہے ۔ ان سرگوشیوں کو اس وقت مزید تقویت حاصل ہوئی جب پارٹی کی سیکریٹری نشر و اشاعت فوزیہ وہاب نے کہا کہ اب سابق وزیر خارجہ کا پارٹی میں کوئی مستقبل نہیں ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ پارٹی ڈسپلن کی خلاف ورزی اور قیادت کیحکم عدولی کرنے پر قریشی کے خلاف تادیبی کارروائی بھی کی جاسکتی ہے۔سابق وزیر راجہ پرویز اشرف نے بھی پارٹی کو بلیک میل کرنے پر مسٹر قریشی پر تنقید کی ۔ فوزیہ وہاب نے کہا کہ مسر قریشی نے پارٹی سے دغا کی ہے اور یہ کوئی پہلا موقع نہیں ہے کہ انہوں نے ایسی حرکت کی ہو اس سے پہلے بھی وہ اس کے مرتکب ہو چکے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ گذشتہ تین سال کے دوران وزیر خارجہ کی حیثیت سے مسٹر قریشی کا رول جواب طلب رہا ہے۔ انہوں نے اس وقت بھی صدر آصف علی زرداری کی کوئی حمایت نہیں کی جب میڈیا ان کے غیر ملکی دوروں پر تنقیدیں کر رہا تھا۔فوزیہ وہاب نے مزید کہا کہ ان کی ان تمام حرکتوں کے باوجود پارٹی قیادت نے انہیں نئی کابینہ میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا۔ لیکن مسٹر قریشی نے جمعہ کو صدارتی محل میں ہوئی تقریب حلف برداری سے صرف 25منٹ قبل ایک بحران پید ا کر دیا تھا۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ پارٹی قیادت کا کام ہے کہ وہ کسے کون سیذمہ داری سونپنا چاہتی ہے لیکن مسٹر قریشی اپنی وزارت میں کوئی تبدیلی نہیں چاہتے تھے۔ یہ معلوم کیے جانے پر کہ کیا مسٹر قریشی کے امریکی شہری ریمنڈ ڈیوس کے معاملے پر کچھ اختلافات ہو گئے تھے، انہوں نے کہا کہ اگر اس میں انہیں کوئی اعتراض تھا تو انہیں پہلے ہی مستعفی ہو جانا چاہئے تھا۔
For news in Urdu visit our page : Latest News, Urdu News

0 comments:

Post a Comment