Friday, January 28, 2011

ممبئی میں شیلا کی جوانی گانے نے ایک شخص کی جان لے لی


ممبئی : یہ شیلا کی جوانی گانا نہ معلوم کیا کیاستم ڈھائے گا۔ اس گانے نے ملک کے مختلف حصوں میں اپنے منفی اثرات مرتب کرنے شروع کر دئے ہیں ۔ اس گانے نے ہی ایک بار پھر تنازعہ کھڑا کر دیا اور دو گروپوں میں ایسی آگ لگائی کہ ایک شخص کو اس وقت جان سے ہاتھ دھونا پڑاجب ممبئی کے باندرہ علاقہ میں اس گانے پر دو گروہوں میں تکرار ہو گئی جس نے ہاتھا پائی کی صورت اختیار کرلی ۔واقعہ یوں بتایا جاتا ہے کہ ایک عورت علی الصباح باندرا کے ٹرانزٹ کیمپ میں اپنے گھر کی جانب جارہی تھی کہ نشہ میں دھت کچھ لوگوں نے اس پر آوازے کسے اور شیلا کی جوانی گانا شروع کر دیا۔اس عورت نے گھر پہنچ کر اپنے رشتہ داروں سے اس کی شکایت کی جنہوں نے ان لوگوں کے رشتہ داروں سے بات کرنے کا فیصلہ کیا۔باندرہ پولس اہلکاروں کے مطابق اس عورت کے کچھ رشتہ داروں کی بھابھا اسپتال میں ان لوگوں کے رشتہ داروں سے کہا سنی ہو گئی جس نے ہاتھا پائی کی شکل اختیار کر لی۔ دونوں فریق اپنیحمایتمیں لوگوں کو جمع کرنے کے لئے منتشر ہو گئے ۔ اسی اثناءمیں رات دو بجے لگ بھگ 450لوگ ٹرانزٹ کیمپ میں جھگڑا کرنے جمع ہو گئے۔ان گانا گانے والے لوگوں کی طرف سےلڑنے کے لئے آنے والوں میں شامل زبیر منصوری نامی تلواروں ، بلموںاور لاٹھیوں کے وار سے زمین پر گر پڑا اور اس نے موقع پر ہی دم توڑ دیا۔ دو افرادساجد قریشی اور امجد شیخ کو اس قتل کے الزام میں گرفتار کر لیا گیا جبکہ 10دیگر فرار ہیں۔ چونکہ اس واقعہ میں دونوں طرف سے سیاسی پارٹیاں شامل ہو گئی ہیں اس لئے پولس پر دونوں ہی طرف سے زبردست دباﺅ پڑ رہا ہے۔عینی شاہدین کے مطابق ساجد اس جھگڑے میں پیش پیش تھا ۔دوسری جانب ساجد کے رشتہ داروں کا کہنا ہے کہ ساجد کو پھنسایا جا رہا ہے۔ اور پولس سچائی جاننے کے لئے اس کا موبائیل فون کا ریکارڈ چیک کر سکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ساجد تو صرف معاملہ رفع دفع کرنے گیا تھا۔
Read In English

For news in Urdu visit our page : Latest News, Urdu News

0 comments:

Post a Comment