Monday, May 30, 2011

میسوری طوفان ایک قومی سانحہ: اوبامہ


واشنگٹن : امریکی صدر بارک اوبامہ نے میسوری میں گذشتہ ہفتہ کے طوفان کو ایک قومی سانحہ سے تعبیر کیا اور ہر شخص کو تلقین کی کہ وہ کم از کم 5تا 10ڈالر عطیہ دے کر تعاون دیں۔اس طوفان میں زبردست جانی و مالی نقصان ہوا ہے۔ تازہ ترین اطلاعات کے مطابق 105افراد لا پتہ ہیں اور 10کلو میٹر رقبہ میں زبردست تباہی مچی ہے نیز 139افراد ہلاک ہوئے ہیں۔صدر اوبامہ نے یقین دہانی کرائی کہ وفاقی حکومت اس قدرتی آفت سے ہونے والی تباہی سے نمٹنے کے لئے ہرممکن مدد کرے گی۔

Read In English

یمن میں سات دھماکے، مظاہرین پر فائرنگ 3ہلاک400زخمی


صنعا: یہاں سات زبردست دھماکوں سے پورا شہر اور اس کا مضافاتی علاقہ دہل اٹھا ۔ یہ دھماکے صنعا کے جنوب میں واقع شہر تائز میں احتجاجیوں کی ایک ریلی میں شامل حکومت مخالفین کو منتشر کرنے کے لئے پولس اور سیکورٹی فورسز کی کارروائی کے فوری بعد ہوئے۔شہر کے ایڈمنسٹریٹیو بلاک کی جانب بڑھنے والے مظاہرین کو تتر بتر کرنے کے لئے سیکورٹی فورسز نے آنسو گیس کے گولے چھوڑے اور گولیاں چلائیں جس میں 3افراد ہلاک اور 400سے زائد زخمی ہو گئے۔یہ احتجاجی مارچ مقامی نوجوان انقلابیوں کی تحریک چلانمے والے ممبران کے زیر اہتمام کیا جا رہا تھا۔ ان مظاہرین کا مطالبہ تھا کہ ان کے ایک ساتھی کو ، جسے سیکورٹی فورسوں نے گرفتار کر لیا ہے، رہا کیا جائے۔
Read In English

امریکہ کو اسامہ کے ٹھکانے تک خود طالبان نے پہنچایا


لندن : یہاں میڈیا کی ایک رپورٹ کےمطابق امریکہ کو ایک طالبان رہنما نے پاکستان کے ایبٹ آباد میں القاعدہ سربراہ اسامہ بن لادن کی موجودگی کی خفیہ اطلاع دی تھی۔ایبٹ آباد میں اسامہ کی راہئش گاہ کے کمپاﺅنڈ سے ملے کاغذات سے پتہ چلا ہے کہ اسامہ کی پناہ گاہ کا راز خود اسامہ کے معتمد خاص اور طالبان کی شریک بانی ملا عبداالباردار نے امریکہ پر ظاہر کیا تھا اور امریکہ نے جواب میں اسامہ کی ہلاکت یا گرفتاری کے بعد افغانستان میں طالبان کے مضبوط ٹھکانوں سے فوجیں واپس بلانے کی پیشکش کی تھی۔ابھی تک یہ کہا جا رہا تھا ہ اسامہ بن لادن کی موجودگی کی خبر اسامہ کے ایلچی اب احمد الکوئتی کی جانب سے کی گئی فون کال کو درمیان میں ہی اچک لینے کی وجہ سے مل سکی تھی۔لیکن پاکستان میں گردش کر رہی اس خبر سے پتہ چلا ہے کہ باردار نے اسامہ کو پکڑوایا ہے ۔باردار ملا عمر کا بھی بہت قریبی ساتھی ہے اسے گذشتہ سال کراچی آتے ہوئے گرفتار کر لیا گیا تھا اور اکتوبر میں اسے تفتیش کے بعد رہا کر دیا گیا تھا۔سیکورٹی ماہر نیل ڈین کے مطابق باردار کا ملا عمر اور اسامہ بن لادن سے بہت نزدیکی تعلق تھا اور وہ افغان حکومت سے مذاکرات بھی شامل تھا۔
Read In English

مارکسی ایم ایل اے کی خود کشی


کولکاتا: بصیر ہاٹ نارتھ انتخابی حلقہ سے مارکسی کمیونسٹ پارٹی کے ایم ایل اے مصطفیٰ بن واسم نے اتوار کی شب ایم ایل اے ہاسٹل کی عمارت کی تیسری منزل سے چھلانگ لگا کر خود کشی کر لی۔پولس ذرائع کے مطابق ایم ایل اے نے تیسری منزل سے چھلانگ لگائی اور وہ وہ نیچے ٹین کے ایک شیڈ پر آکر گر اور موقع پر ہی دم توڑ دیا ۔وہ 80برس کے تھے۔حادثہ کی اطلاع ملتے ہی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی جائے وقوع پر پہنچ گئیں۔ وزیر صنعت پارتھا چٹرجی نے کہا کہ متوفی کے پاس سے خودکشی نامہ بر آمد ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ قاسم 1977میں پہلی بار مغربی بنگال اسمبلی کے لئے منتخب ہوئے تھے اور اس کے بعد پھر 1991سے 2011تک ممبر اسمبلی رہے وہ کچھ عرصہ سے گردہ کے عارضہ میں مبتلا تھے۔انہوں نے یہ بھی بتایا کہ قاسم یہاں مغربی بنگلا اسمبلی کے اسپیکر کے چناﺅ کے موقع پر ان ممبران اسمبلی میں شامل تھے جو یہاں اپنے چناﺅ حلقوں سے آکر جمع ہوئے تھے۔قاسم کی ہلاکت سے سی پی ایم کے ممبران اسمبلی کی تعداد گھٹ کر 39اور بایاں محاذ کی 61رہ گئی ہے۔
Read In English

نائیجیریا میں کئی بم دھماکے12ہلاک ،20زخمی


ابوجہ: مقامی قانون نافذ کرنے والے افسروں کے مطابق نئیجیریا میں کے شہر باﺅچی میں کئی بم دھماکوں میں کم از کم 12افراد ہلاک اور تقریباً 20دیگر زخمی ہو گئے۔کہا جاتا ہے کہ یہ دھماکے دہشت گردوں نے کئے ہیں ۔ یہ دھماکے اس مے خانہ میں ہوئے جو فوجیوں کے تصرف میں ہے اور وہ وہاں مے نوشی کرتے ہیں۔ باﺅچی شہر ایک ایسے علاقہ میں بسا ہوا ہے جہاں جنوبی نائجیریا کے عیسائی اور شمالی حصہ کے مسلمان آباد ہیں۔یہ دھماکے ملک کے نئے عیسائی صدر جوناتھن گڈلک کی تقریب حلف برداری کے چند گھنٹے بعد ہوئے۔باﺅچی کے پولس سربراہ عبد القادر محمد اندبوا نے بتایا کہ اتوار کی شب اس فوجی بار میں تین دھماکے ہوئے جن میں 12افراد ہلاک ہوئے جبکہ 4زخمیوں کی حالت نازک ہے۔اپریل م یں جیسے ہی انتخابی رجحانات آنے شروع ہوئے اور جوناتھنکی فتح کی جانب پیش قدمی ہوئی پر تشدد وارداتیں ہونے لگیں جس میں کم از کم 800افراد ہلاک ہو گئے ۔ مسلمانوں کا اصرار تھا کہ اس بار کسی مسلم صدر کی بر سر اقدار آنے کی باری تھی۔
Read In English